Powered by TheAquaSoft


Search Results: games

انفارمیشن کمیونی کیشن سیکٹرکی سب سے بڑی نمائش شروع

Published: Oct 9, 2013 Filed under: Latest Beats

کراچی ایکسپو سینٹر میں انفارمیشن کمیونی کیشن سیکٹر کی سب سے بڑی نمائش کا آغاز ہوگیا ہے۔

13ویں آئی ٹی سی این ایشیا2013 نمائش کے پہلے ہی روز نمائش دیکھنے کے لیے شہریوں بالخصوص نوجوانوں کا تانتا بندھ گیا، تین روزہ نمائش جمعرات10اکتوبر تک جاری رہے گی جس میں ملکی و غیر ملکی کمپنیاں انفارمیشن ٹیکنالوجی کی جدید مصنوعات کی نمائش کررہی ہیں، نمائش کا افتتاح چیئرمین بورڈ آف انویسٹمنٹ محمد زبیر موتی والا اور کراچی چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے صدر عبداللہ ذکی نے کیا جبکہ نمائش کے دوران اسٹیٹ بینک کے ڈپٹی گورنر قاضی عبدالمقتدر، نادرا کے چیئرمین طارق ملک، ڈاکٹر سرفراز عالم اور دیگر نے بھی مختلف اسٹالز کا دورہ کیا۔

آئی ٹی سی این ایشیا نمائش کے دوران کراچی ایکسپو سینٹر کے ہال نمبر 1اور 2میں 15سے زائد ممالک کی کمپنیوں نے اپنے اسٹالز لگائے ہیں، نمائش میں اسٹالز لگانے والی کمپنیوں کا تعلق امریکا، برطانیہ، متحدہ عرب امارات، روس، چین، جرمنی، تائیوان اور دیگر ممالک سے ہے، اس نمائش میں 55 غیر ملکی وفود کی شرکت بھی متوقع ہے، نمائش میں آئی ٹی مصنوعات، جدید مواصلاتی نظام سے متعلق سامان، موبائل انڈسٹری میں استعمال ہونے والے آلات اور جدید سیکیورٹی سسٹم رکھے گئے ہیں، نمائش میں نادرا کی جانب سے بھی اسٹال لگایا گیا ہے۔

جہاں شرکا کو نادرا کی خدمات سے متعلق مکمل آگہی فراہم کی جارہی ہے جبکہ عوام کو شناختی کارڈ اور پاسپورٹ بنوانے کے حوالے سے رہنمائی بھی فراہم کی جارہی ہے، نمائش کے پہلے روز عوام کی ایک بڑی تعداد نے کراچی ایکسپو سینٹر کا دورہ کیا اور نمائش میں رکھی گئی مصنوعات میں گہری دلچسپی کا اظہار کیا، نمائش میں شرکت کے لیے آنے والوں میں بڑی تعداد اسکول و کالجوں کے طلباو طالبات کی تھی جنہوں نے غیر ملکی کمپنیوں کے اسٹالز میں بھرپور دلچسپی لی اور غیر ملکی کمپنیوں کی جانب سے ڈسپلے کی گئی جدید مصنوعات کو سراہا، نمائش میں بچوں کی دلچسپی کے لیے کمپیوٹر گیمز بھی رکھے گئے تھے ۔

جہاں بچے جدید سسٹم پر گیمز کھیلتے ہوئے بھی نظر آئے، نمائش میں سب سے بڑا اسٹال ٹیکسپو کی جانب سے لگایا گیا تھا جہاں لوگوں کا بے پناہ رش رہا، 3 روز ہ آئی ٹی سی این نمائش میں جدید مصنوعات کے ڈسپلے کے ساتھ ساتھ 8 کانفرنس کی سیریز بھی ہوگی جس میں انفارمیشن ٹیکنالوجی اور ٹیلی کام کے موضوع پر ماہرین تبادلہ خیال کریں گے۔

http://www.express.pk/story/183848/


اسکواش کب تک اولمپکس سے باہر؟

Published: Sep 12, 2013 Filed under: Latest Beats

دس بار برٹش اوپن جیتنے والے جہانگیرخان کو اب بھی یقین نہیں آرہا کہ اسکواش اولمپکس میں جگہ نہیں بناسکا ہے اور وہ اسے اپنےکھیل کے ساتھ ناانصافی سے تعبیر کرتے ہیں۔

انٹرنیشنل اولمپک کمیٹی نے 2020 کے اولمپکس میں کسی نئے کھیل کے بجائے ایک بار پھر ریسلنگ کوشامل کرلیا ہے جسے چند ماہ پہلے ہی اولمپکس سے خارج کیا گیا تھا۔

اسکواش کو اولمپکس کا حصہ بنانے کی کوششیں کافی عرصے سے جاری ہیں اور ان کوششوں میں جہانگیرخان پیش پیش رہے ہیں جو ورلڈ اسکواش فیڈریشن کے صدر بھی رہ چکے ہیں۔

جہانگیر خان نے بی بی سی کو دیے گئے خصوصی انٹرویو میں کہا کہ اسکواش کو اولمپکس میں شامل نہ کرنے کے فیصلے سے انہیں دھچکہ پہنچا ہے ۔ وہ اس بار سوچ بھی نہیں سکتے تھے کہ اسکواش کو نظرانداز کردیا جائے گا کیونکہ اس مرتبہ اسکواش کی اولمپکس میں شمولیت کے امکانات خاصے روشن تھے۔

جہانگیر خان نے کہا کہ اولمپکس میں کسی نئے کھیل کی شمولیت میں لابنگ بہت اہم کردار ادا کرتی ہے جبکہ فیصلہ کرنے والے آئی او سی کے ارکان اس کھیل کی مقبولیت۔ مالی حیثیت اور دیگر پہلوؤں پر بھی نظر رکھتے ہیں۔ جہاں تک اسکواش کا تعلق ہے اس نے کوئی کسر نہیں چھوڑی ہے اور وہ اولمپکس کی تمام تر شرائط اور ضروریات پر پورا اترتا ہے اس کے باوجود اس کا اولمپکس میں نہ ہونا حیران کن ہے۔

چھ بار ورلڈ چیمپئن بننے والے جہانگیرخان نے کہا کہ اسکواش دنیا بھر میں کھیلا جارہا ہے۔ گلاس وال کورٹس کہیں بھی نصب کئے جاسکتے ہیں لہذا اولمپکس کے منتظمین کے لئے یہ بھی کوئی بڑا مسئلہ نہیں ہے۔ اس کھیل کی کوریج بھی بہت زیادہ ہے اور جدید ٹیکنالوجی کے ذریعے ٹی وی کوریج بھی بہت اچھی ہوچکی ہے لہذا انہیں سمجھ میں نہیں آتا کہ انٹرنیشنل اولمپک کمیٹی کے ارکان کس وجہ سے اسکواش کو اولمپکس میں شامل نہیں کررہے ہیں۔

بین الاقوامی اسکواش میں ساڑھے پانچ سال ناقابل شکست رہنے والے جہانگیر خان نے کہا کہ انہیں ان کھلاڑیوں سے ہمدردی ہے جو اگلے چار پانچ سال تک کھیل سکتے ہیں وہ اسکواش کی اولمپکس میں شمولیت کی صورت میں میڈلز کے خواب دیکھ رہے تھے لیکن انہیں سخت مایوسی کا سامنا کرنا پڑا ہے۔

جہانگیرخان نے کہا کہ اس مایوس کن صورتحال کے باوجود اولمپکس میں اسکواش کو شامل کرنے کی کوششیں جاری رہیں گی۔اسکواش کا دنیا بھر میں جو مقام ہے اس کے پیش نظر اسے اس کا حق ملنا چاہئے۔اگر اسکواش اولمپکس میں نہیں ہے تو اس کا مطلب ہرگز یہ نہیں ہے کہ یہ کوئی معمولی کھیل ہے ۔ وہ وقت ضرور آئے گا جب سب اسکواش کو اولمپکس میں بھی دیکھیں گے۔



Page 1 of 1