Join Us On Facebook

Please Wait 10 Seconds...!!!Skip

کراچی دہشت گردوں کا شہر بن چکا، اچکزئی ریمارکس پر معافی مانگیں، ارکان متحدہ

Published: Sep 19, 2013 Filed under: Latest Beats Views: 190 Tags: Pakistan, international, politics, mahmood, mehmood, achakzai, nro, 12 may, terror, karachi, dehshat
[+] [a] [-] Related Beats Comments

قومی اسمبلی پختونخوا ملی عوامی پارٹی کے سربراہ محمود خان اچکزئی نے کہا ہے اگر سانحہ 12 مئی کی تحقیقات نہ کرائی گئی تو ملک نہیں چلے گا۔

ماضی میں کراچی میں غلط حلقے بنائے گئے جس کی وجہ سے وہاں آباد قوموں کے درمیان نفرتیں پیدا ہوتی گئیں اور اب صورتحال یہ ہے کہ کراچی دہشت گردوں کا شہر بن چکا ہے جبکہ ایم کیو ایم نے شدید احتجاج کرتے ہوئے مطالبہ کیا کہ محمود اچکزئی اپنے ریمارکس پر معافی مانگیں۔ بدھ کو صدارتی خطاب پر بحث کرتے ہوئے محمود اچکزئی نے کہا کہ 12 مئی 2007 کو کراچی کی سڑکوں پر خون کی ہولی کھیلی گئی لیکن اس کی ابھی تک تحقیقات ہی نہیں کرائی گئیں ، اس واقعے کی تحقیقات کیلیے اپنی مدعیت میں مقدمہ درج کرانے کو تیار ہوں۔

سابق آمر جنرل پرویز مشرف نے بے نظیر بھٹو سے ڈیل کرکے این آر او جیسا کالا قانون رائج کیا جس کے تحت 8300 سے زائد لٹیرے، دہشت گرد اور قاتل رہا ہوگئے اور ملک کی جیلوں میں صرف جوتی اورسائیکل چور ہی رہ گئے، وزیرداخلہ میری تقریر کو ایف آئی آر سمجھ کر دونوں معاملات کی تفتیش کرائیں ، اگر ایسا نہ ہوا تو ملک نہیں چلے گا۔ قبائلی علاقوں کے لوگ اپنی زمین سے محبت کرتے ہیں ، وہ فوج اور دیگر خارجیوں کو اچھی نظر سے نہیں دیکھتے ، وفاق کے ماتحت قبائلی علاقوں میں پولیٹیکل ایجنٹ کو حاصل اختیارات اللہ میاں سے کچھ ہی کم ہیں ، پولیٹیکل ایجنٹوں کے لامحدود اختیارات کو کم کیا جائے اور فاٹا کی ساتوں ایجنسیوں پر مشتمل ان کی اپنی اسمبلی بنائی جائے اور گورنر کے انتخاب کا اختیار بھی فاٹا کے لوگوں کو دیا جائے۔

ایم کیوایم کے رکن ساجد احمد نے کہا کہ کراچی کو دہشت گردوں کا شہر قرار دینا اور سانحہ 12 مئی کے واقعے کی تحقیقات کے مطالبے کا مقصد ایم کیوایم کو نشانہ بنانا ہے ، محمود اچکزئی اپنے ریمارکس پر معافی مانگیں۔ عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید احمد نے کہا کہ مختلف ممالک سے دہشت گرد پاکستان میں داخل ہوچکے ہیں، اسلام آباد غیر محفوظ شہر بن گیا ۔ پیپلز پارٹی کے رکن اصغر علی شاہ نے کہا کہ سندھ میں بسنے والی اقلیتوں کی ہجرت کا سلسلہ روکا جائے۔آزاد رکن جمشید احمد دستی نے کہا کہ ہم آمروں کو گالی دیتے ہیں لیکن ہم جمہوری لوگوں نے کونسا بہتر کام کیا ہے، اے پی سی کے بعد ہمارے فوجی افسران کو شہید کیا گیا ، اس کے پیچھے طالبان نہیں امریکا ہے ، اس کے سفارت خانے کو بند کر دیا جائے،ہمارے لوگوں کو بلوچستان میں قتل کیا جا رہا ہے ، میں نے 60 لاشیں وصول کی ہیں ،آرمی چیف اسمبلی میں آکر بریفنگ دیں یہ اجلاس ان کیمرہ نہیں ہونا چاہیے ۔

صدارتی خطاب پر بحث کے بعد بھی ایم کیو ایم کے ارکان عبد الرشید گوڈیل، اقبال محمد علی خان، ساجد احمد اور ریحان ہاشمی نے محمود اچکزئی کے ریمارکس پر احتجاج جاری رکھا اور کہا کہ 12 مئی کا ذکر تو کیا جاتا ہے لیکن 14 مئی کی بھی تحقیقات کی جائیں، محمود اچکزئی کے ریمارکس کوکارروائی سے حذف کیا جائے تاہم اجلاس کے صدر نشین ڈاکٹر طارق فضل چوہدری نے انکے اس مطالبے پر کسی ردعمل کا اظہار نہیں کیا اور اجلاس آج جمعرات کی صبح ساڑھے دس بجے تک ملتوی کردیا 


Post your comment

Your name:


Your comment:


Confirm:



* Please keep your comments clean. Max 400 chars.

Comments

Be the first to comment