Join Us On Facebook

Please Wait 10 Seconds...!!!Skip

بھارت: مدھیہ پردیش میں مذہبی تہوار کے دوران بھگدڑ، 89 ہلاک

Published: Oct 13, 2013 Filed under: Latest Beats Views: 367 Tags: india, international, madhia, perdaish, ratan garh
[+] [a] [-] Related Beats Comments

بھارت کی شمالی ریاست مدھیہ پردیش مدھیہ پردیش کے وزیر صحت نروتتم مشرا نے بتایا ہے کہ رتنگڑھ ماں نامی مندر کے پاس بنے پل پر بھگدڑ میں نواسی افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔

حکام کا کہنا ہے کہ واقعے میں متعدد زخمی بھی ہو گئے ہیں۔ پولیس کے مطابق واقعہ اتوار کی صبح ضلع داتیا میں نوراتری کے تہوار کے موقع پر پیش آیا

اس سے قبل علاقے کے انسپیکٹر جنرل پولیس ای ایم افضل نے بی بی سی کو بتایا کہ اتوار کی صبح ہوئے اس حادثے میں تقریبا سو افراد زخمی بھی ہوئے ہیں۔

جائے حادثہ پر موجود اجے مشرا کے مطابق ہلاک ہونے والوں میں خواتین اور بچے بھی بڑی تعداد میں شامل ہے۔

مقامی صحافی رش پانڈے کے مطابق اس مندر میں ہر سال اس تہوار کے لیے لاکھوں عقیدت مند آتے ہیں، لیکن اتنے زیادہ لوگوں کی مناسبت سے پولیس انتظام نہیں کیا گیا تھا۔

اتوار کی صبح سات سے آٹھ بجے کے درمیان داتيا سے پچپن کلومیٹر دور واقع رتنگڑھ ماں نامی مندر جانے کے دوران ایک پل پر یاتریوں میں پل ٹوٹنے کی افواہ پھیلی، جس کے بعد صورتحال نے بھگدڑ کا روپ اختیار کر لیا۔ کئی لوگ بھگدڑ میں کچلے گئے جبکہ کئی جان بچانے کے لئے دریا میں کود گئے

ایک عینی شاہد نے بی بی سی کو بتایا ’پل پر ہزاروں لوگ اچانک چیختے ہوئے کنارے کی طرف بھاگنے لگے، جس سے بھگدڑ مچ گئی۔ بھگدڑ کے دوران کچھ لوگ کچلے گئے اور کچھ جان بچاتے ہوئے دریا میں کود گئے۔ میں اور میرے کچھ دوست پل کے دوسرے سرے کے پاس تھے اس لیے بچ نکلے

مدھیہ پردیش کے ضلع داتيا کے پاس دریائے سندھ پر پل پر بھگدڑ مچ جانے کے بعد کئی لوگ دریا میں گر گئے۔ بتایا جاتا ہے کئی لوگ بھگدڑ سے بچنے کے لیے دریا میں کود پڑے۔

مقامی لوگوں کے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ کئی لوگ دریا میں کودنے کی وجہ سے لاپتہ بھی ہوئے ہیں۔

پولیس ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل سربجیت سنگھ نے بی بی سی کو فون پر بتایا کہ جائے حادثہ پر امدادی کام جاری ہے۔

مقامی صحافی آلوک روشنی پتل کے مطابق تہوار کی وجہ سے گوالیار سے داتيا جانے والی سڑک پر ٹریفک کا رش ہے۔ اس کی وجہ سے زخمیوں کو داتيا کے ہسپتالوں میں علاج کے لیے لے جایا جا رہا ہے

اتوار کی صبح داتيا سے تقریباً 55 کلومیٹر دور رتنگڑھ ماں مندر کے پاس بنے پل پر اچانک بھگدڑ کی صورت پیدا ہو گئی۔

یہ مندر سندھ دریا کے ایک کنارے پر واقع ہے اور دوسری طرف سے مندر آنے جانے کے لیے دریا پر پل بنا ہے۔

ریاست کے وزیر اعلی شیوراج سنگھ چوہان نے معاملے کی عدالتی تحقیقات کا حکم دیا ہے اور مرنے والوں کے اہل خانہ کو ڈیڑھ لاکھ اور زخمیوں کو پچیس ہزار روپے معاوضہ دینے کی بات کی ہے۔

مندر پل کے ایک کنارے پر ہے اور دوسرے سرے سے مندر کی طرف آنے کے لئے عقیدت مند اسی پل سے گذرتے ہیں۔

سنہ دو ہزار سات میں بھی اس مندر کے پاس ایک پل پر ایسا ہی حادثہ ہوا تھا جس میں کئی افراد ہلاک ہو گئے تھے۔ اس حادثے کے بعد ہی پکا پل بنایا گیا تھا


Post your comment

Your name:


Your comment:


Confirm:



* Please keep your comments clean. Max 400 chars.

Comments

Be the first to comment