کوہاٹی گیٹ میں واقع  گرجا گھر میں یکے بعد دیگرے دو خودکش دھماکوں سے جاں بحق افراد کی تعداد56 ہوگئی ہے جبکہ سو سے زائد افراد زخمی ہیں 

ایکسپریس نیوز کے مطابق پشاور کے علاقے کوہاٹی گیٹ میں واقع سینٹ جان چرچ میں اتوار کے روز ہونے والی خصوصی دعائیہ تقریب میں شرکت کے بعد مسیحی برادری کے سیکڑوں افراد باہر آرہے تھے کہ ایک خودکش حملہ ہوا جس کے فوری بعد دوسرے حملہ آور نے بھی اپنے آپ کو ہجوم میں آکر دھماکا خیز مواد سے اڑا دیا۔ دھماکے کے  نتیجے میں 56 افراد جاں بحق جبکہ درجنوں زخمی ہوگئے ہیں، جاں بحق ہونے والوں میں بچے اور خواتین بھی شامل ہیں، مقامی ریسکیو اہلکاروں نے لاشوں اور زخمیوں کو لیڈی ریڈنگ اسپتال پہنچادیا گیا ہےتاہم چھٹی کا روز ہونے کے باعث اسپتال میں طبی عملے کی تعداد انتہائی کم ہے جس کی وجہ سے زخمیوں کو طبی امداد کی فراہمی میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔اسپتال میں زخمیوں کی تعداد زیادہ ہونے کی وجہ سے بستروں کی تعداد کم پڑ گئی ہے جبکہ تابوت بھی ختم ہوگئے ہیں جس کے باعث میتوں کی ورثا کو حوالگی میں بھی مشکلات پیش آرہی ہیں۔پولیس اور سیکیورٹی اہلکاروں کی بھاری نفری نے دھماکے کی جگہ اور علاقے کو گھیرے میں لے لیا ہے، تحقیقاتی ٹیموں نے خودکش حملہ آورکےجسمانی اعضاء سمیت دیگر شواہد بھی قبضے میں لےلئے ہیں۔

دھماکے کے بعد مشتعل ہجوم نے سیکیورٹی کے ناقص انتظامات پر احتجاج کرتے ہوئے چرچ روڈ پر احتجاج کیا اور وہاں پولیس کی ودریوں کو نذر آتش کیا دوسری جانب لیڈی ریڈنگ اسپتال میں سہہولیات اور طبی عملے کی کمی پر بھی عوام میں شدید غم و غصہ پایا جاتا ہے۔

صدر مملکت ممنون حسین، وزیر اعظم نواز شریف، ایم کیو ایم کے قائد الطاف حسین اور عوامی نیشنل پارٹی کے ترجمان زاہد خان نے پشاور کی شدید مذمت کرتے ہوئے جاں بحق افراد کے لواحقین سے گہرے دکھ کا اظہار کیا ہے۔ اے این پی  اور کونسل برائے عالمی مذاہب کی جانب سے 3 روزہ سوگ کا اعلان کیا گیا ہے، کونسل برائے عالمی مذاہب کے مطابق ملک بھر کے تمام مشنری تعلیمی ادارے 3 دن تک بند رہیں گے۔

Post your comment

Your name:


Your comment:


Confirm:



* Please keep your comments clean. Max 400 chars.

Comments

Be the first to comment